More share buttons
Share with your friends










Submit
Featuredدنیا

سابق وزیراعظم کو کرپشن کے تمام الزامات ثابت ہونے پر مجرم قرار دے دیا

منی لانڈرنگ، اختیارات کا غلط استعمال اور دھوکادہی کے مقدمات بھی شامل ہیں

Share on Pinterest
Share with your friends










Submit

 عدالت نے سابق وزیراعظم کو کرپشن کے تمام الزامات میں مجرم قرار دیا تاہم انہوں نے صحت جرم سے انکار کردیا۔

ملائیشیا کی عدالت نے سابق وزیراعظم نجیب رزاق کو ملین ڈالرز کی کرپشن کے تمام الزامات ثابت ہونے پر مجرم قرار دے دیا۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق 2009 سے 2018 تک ملائیشیا کے وزیراعظم رہنے والے نجیب رزاق پر کرپشن کے 7 مقدمات ہیں جن میں منی لانڈرنگ، اختیارات کا غلط استعمال اور دھوکا دہی کے مقدمات بھی شامل ہیں۔

ملائیشیا کی عدالت نے سابق وزیراعظم نجیب رزاق کو کرپشن کے تمام الزامات میں مجرم قرار دیا تاہم نجیب رزاق نے صحت جرم سے انکار کردیا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق نجیب رزاق ملائیشیا کے پہلے رہنما ہیں جن پر کرپشن کے الزامات ثابت ہوئے ہیں۔

کیس کی سماعت کرنے والے جج نے اپنے فیصلے میں کہا کہ مدعی اس کیس میں یہ بات ثابت کرنے میں ناکام ہوا کہ ملین ڈالرز کی نجیب رزاق کے ذاتی اکاؤنٹس میں منتقلی میں سابق وزیراعظم کا کوئی کردار نہیں جب کہ استغاثہ نے اپنا کیس کامیابی سے ثابت کیا جس پر نجیب رزاق کو مجرم قرار دیا گیا ہے۔

جج نے اپنے فیصلے میں مزید کہا کہ 67 سالہ نجیب رزاق ملائیشیا کے وزیر خزانہ بھی رہے ہیں اور اس دوران انہوں نے اپنے جائز اختیارات سے تجاوز کرتے ہوئے قرضوں کی منظوری دی جو بعد میں فنڈز کی صورت میں ان کے ذاتی اکاؤنٹ میں منتقل کیے گئے۔

عدالت نے اپنے فیصلے میں کہا کہ نجیب رزاق نے قرضوں کی منظوری سے فائدہ اٹھایا اور مدعی اختیارات کے غلط استعمال کے جرم سمیت تمام کیسز میں اپنا دفاع کرنے میں ناکام رہا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق نجیب رزاق کو دہائیوں کی سزا کے بعد بھاری جرمانے کا بھی سامنا ہے اگرچہ انہیں الزامات کے تحت کوڑوں کی سزا بھی سنائی گئی ہے لیکن ان کی عمر کو دیکھتے ہوئے یہ سزا معاف کیے جانے کا امکان ہے۔

میڈیا رپورٹس میں کہا گیا ہےکہ نجیب رزاق کی اپیلیں خارج ہونے تک انہیں قید نہ کیے جانے کا بھی امکان ہے۔

میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہےکہ عدالت کا فیصلہ ہائیکورٹ کے فیصلے کے صرف 6 روز بعد ہی سامنے آیا ہے جس میں ہائیکورٹ نے نجیب رزاق کو ٹیکسز اور پینلٹیز نہ دینے کی مد میں حکومت کو 400 ملین ڈالرز ادا کرنے کا حکم دیا ہے۔

نجیب رزاق کے کیس کی سماعت کے موقع پر ان کے ہزاروں سپورٹرز اظہار یکجہتی کے لیے عدالت کے باہر جمع تھے جنہوں نے عدالتی فیصلے کی سخت مذمت کرتے ہوئے اسے سیاسی انتقام قرار دیا جب کہ نجیب رزاق کے کئی سپورٹرز عدالتی فیصلے پر زارو قطار رونے پر بھی لگے۔

Share on Pinterest
Share with your friends










Submit
Tags

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close