More share buttons
Share with your friends










Submit
اسلام آباد

ایران کو خطرہ سمجھنے والے پاک ایران تعلقات میں رخنہ اندازی کر رہے ہیں، مخدوم شاہ محمود قریشی

Share on Pinterest
Share with your friends










Submit

اسلام آباد: وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے طالبان اور امریکا کے مابین مذاکرات میں پیش رفت کے بعد وزیراعظم عمران خان اور امریکا کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے درمیان ملاقات کا عندیہ دے دیا۔ شاہ محمود قریشی نے میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ دوحہ میں جاری مذاکرات میں پیش رفت سے دونوں اہم رہنماؤں کی ملاقات کے لیے راہ ہموار ہوگی۔

اس سوال کے جواب میں کہ کیا طالبان اور امریکا کے مذاکرات میں پیش رفت دونوں رہنماؤں کی ملاقات سے مشروط ہے؟ انہوں نے کہا کہ اس کو مشروط مت قرار دیں, لیکن میں سمجھتا ہوں کہ اگر بات چیت کا مرحلہ آگے بڑھتا ہے تو ماحول بہت سازگار ہو جائے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ دونوں وزیراعظم عمران خان اور امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اہم شخصیات ہیں اور دونوں ہی خطے میں امن اور استحکام کے خواہاں ہیں۔ وزیر خارجہ نے کہا کہ امریکا اور طالبان کے مابین دوحہ میں مذاکرات تاحال جاری ہیں، جو خطے میں امن اور استحکام میں پیش رفت کا باعث بنیں گے۔

یہ بھی پڑھیں: ایران امریکا تنازع کی صورت میں کسی کی حمایت نہیں کریں گے، وزیر خارجہ شاہ محمود

انہوں نے کہا کہ مذاکرات میں مزید پیش رفت کا امکان ہے، جس سے واشنگٹن اور اسلام آباد کے درمیان دوطرفہ تعلقات کے نئے دور کا آغاز ہوگا۔ شاہ محمود قریشی نے ایران سے تعلقات سے متعلق سوال کے جواب میں کہا کہ بعض طاقتیں تہران اور اسلام آباد کے مابین تعلقات میں رخنہ ڈالنے کی کوشش کر رہی ہیں، تاکہ اپنا ذاتی ایجنڈا حاصل کرسکیں۔

ان کا کہنا تھا کہ جب کبھی دونوں ممالک کے درمیان تعلقات خراب کرنے کی کوشش کی گئی، تب تب ایران اور پاکستان نے اعلیٰ سطح پر دوطرفہ مذاکرات کے ذریعے ہر منفی کوشش کو ناکام بنا دیا۔ وزیر خارجہ نے مزید کہا کہ ایسی طاقتیں ہیں، جو ایران کو خطے میں خطرہ سمجھتی ہیں، انہوں نے کہا کہ وہ طاقتیں کون سی ہیں، وہ اس حوالے سے ابھی نام نہیں لے سکتے۔

سعودی عرب کو درپیش سکیورٹی خدشات سے متعلق سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ پاکستان، ریاض کے ساتھ کھڑا ہے اور جب کبھی خطرہ ہوا، ہم ہر ممکنہ خدمات پیش کریں گے۔ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ پاکستانی وفد چین میں فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) کے وفد کو منی لانڈرنگ اور دہشت گردوں کی مالی ماونت سے متعلق اٹھائے گئے اقدامات سے متعلق آگاہ کر رہا ہے۔
انہوں نے امید ظاہر کی کہ جون میں ہونے والے ایف اے ٹی ایف اجلاس میں پاکستان کو گرے لسٹ سے نکال دیا جائے گا۔ واشنگٹن کی جانب سے تین سرکاری افسران پر ویزا پابندی عائد کرنے سے متعلق سوال کے جواب میں شاہ محمود قریشی نے کہا کہ عائد کردہ پابندی عارضی ہے۔

Share on Pinterest
Share with your friends










Submit
ٹیگز
مزید دیکھیں

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے