More share buttons
Share with your friends










Submit
دنیا

بل گیٹس کی طلاق کا معاملہ : نیا پنڈورا با کس کھل گیا

Share on Pinterest
Share with your friends










Submit

گزشتہ سال مارچ کے مہینے میں مائیکرو سافٹ کے بانی اور دنیا کے امیر ترین افراد میں شامل بل گیٹس نے اعلان کیا تھا کہ وہ فلاح وبہبود کے کاموں کو وقت دینے کے لیے اپنے منصب سے دستبردارہورہے ہیں۔

 

 

 

بین الاقوامی میڈیا کے مطابق بل گیٹس کی طلاق اور عہدے سے دستبردار ہونے کی حقیقت اصل میں کچھ اور ہے، مائیکروسافٹ کی جانب سے جاری ہونے والے بیان نے ایک نیا پنڈورا با کس کھول دیا ہے۔

مائیکروسافٹ کی جانب سے جاری کردہ بیان کے مطابق بل گیٹس ایک خاتون ملازمہ سے ناجائز تعلقات کے خواہش مند تھے اور اسی وجہ سے انہیں عہدے سے برطرف کیا گیا تھا۔

یہاں یہ با ت بھی قابل ذکر ہےکہ مائیکروسافٹ کارپوریشن نے بل گیٹس کے خاتون ملازمہ کے ساتھ دو دہائی پر محیط رومانوی تعلقات پر2019 میں تحقیقات کیں۔

 

 

جب اس سلسلے میں تحقیقات شروع ہوئی تومائیکرو سافٹ کے بانی بل گیٹس اپنے عہدے سے دستبردار ہوگئے جس کے نتیجے میں تحقیق کسی بھی انجام کو نہیں پہنچ سکی۔

مائیکروسافٹ کی جانب سے جاری کردہ بیان کے مطابق بل گیٹس کے خاتون ملازمہ کے ساتھ رومانوی تعلقات کی حقیقت جاننے کے لیے بیرونی قانونی فرم کو ہائرکیا گیا لیکن اس دوران مائیکرو سافٹ نے مذکورہ ملازمہ کو مکمل سپورٹ فراہم کی۔

بیرونی قانونی فرم کی جانب سے اس معاملے پر کی گئی تحقیقات کے بعد یہ رپورٹ سامنے آئی کہ بل گیٹس کی خاتون ملازمہ میں دلچسپی غیر مناسب تھی جس کی بنیاد پر مائیکروسافٹ کے ڈائریکٹرز نے گزشتہ سال انہیں عہدے سے ہٹانے کا فیصلہ کیا۔

 

 

واضح رہےکہ مائیکروسافٹ نے اس تحقیقات کی مزید تفصیلات فراہم نہیں کی۔

رواں سال مئی کے مہینے میں بل گیٹس اوران کی اہلیہ میں 27 سالہ ازدواجی زندگی کے بعد علیحدگی ہو گئی تھی۔

مائیکرو سافٹ کمپنی کے بانی بل گیٹس اور ان کی اہلیہ نے طلاق کے حوالے سے ٹوئٹر پر مشترکہ بیان بھی جاری کیا تھا۔

 

یہ بھیپڑھیں:وزیر اعظم عمران خان اور بل گیٹس میں ٹیلیفونک رابطہ

 

مشترکہ بیان میں کہا گیا کہ تعلقات پر بہت سوچ و فکر کے بعد شادی کو ختم کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔

دونوں کا اس حوالے سے کہنا تھا کہ مستقبل میں علحیدگی کے باوجود فلاحی منصوبے مل کر چلاتے رہینگے۔

Share on Pinterest
Share with your friends










Submit
Tags

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close