More share buttons
Share with your friends










Submit
دنیا

غیرملکی فوجیوں کے انخلا کے بعد ترک فوج کابل ہوائی اڈے کی حفاظت کرے گی

Share on Pinterest
Share with your friends










Submit

انقرہ: ترک صدر طیب اردوان نے کہا ہے کہ طالبان کو افغانستان میں اپنے بھائیوں کی سرزمین سے قبضہ ختم کرکے دنیا کو دکھانا چاہیئے کہ امن عمل خیر اسلوبی کے ساتھ جاری ہے جس میں طالبان کا کردار مثبت ہے

ترک صدر نے افغانستان میں جاری جھڑپوں سے متعلق کہا کہ طالبان کا رویہ ایسا نہیں جیسا کہ ایک مسلمان کو دوسرے مسلمان کے ساتھ پیش آنا چاہیئے۔

صدر طیب اردوان نے یہ بیان طالبان کے اس انتباہ کے بعد جاری کیا ہے جس میں طالبان نے کابل ہوائی اڈے کی حفاظت کے لیے ترکی فوج کے افغانستان میں قیام پر خبردار کیا تھا۔

قبل ازیں جب ترک صدر سے طالبان وارننگ سے متعلق پوچھا گیا تھا تو ان کا کہنا تھا کہ طالبان نے اپنی دھمکی میں کہیں بھی ترک فوجی کا لفظ استعمال نہیں کیا یعنی یہ دھمکی ترک فوجیوں کے لیے نہیں ہے۔

یہ بھی پرھیں: افغانستان میں امریکا کی مدد کرنے والوں کو تنہا نہیں چھوڑیں گے

طالبان نے اپنے بیان میں کہا تھا کہ کسی بھی غیرملکی فوج کو کسی بھی بہانے افغان سرزمین میں رکنے کی اجازت نہیں دیں گے۔ انخلا کی ڈیڈ لائن کے بعد ایک بھی غیرملکی فوجی کی موجودگی کو قبضہ تصور کیا جائے گا۔

افغانستان سے غیر ملکی فوجیوں کے انخلا کا عمل تیزی سے جاری ہے جس کے دوران ہی طالبان نے پاکستان، چین، ایران، تاجکستان اور ترکمانستان سے متصل افغان سرحدوں کا کنٹرول حاصل کرلیا ہے۔

ترکی نے امریکا کو افغانستان سے غیر ملکی فوجیوں کے انخلا کے بعد ملک کے اہم ترین کابل کے ہوائی اڈے کی حفاظت کی پیشکش کی تھی جسے صدر جوبائیڈن نے قبول کرلیا تھا۔ کابل ایئرپورٹ غیرملکی سفارت کاروں اور مشنز کی آمد ورفت کا واحد ذریعہ ہے جس کی اب حفاظت ترک فوج کرے گی۔

Share on Pinterest
Share with your friends










Submit
Tags

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close